کرونا کی وجہ سے لوگوں میں خاموشی سے کونسی نئی بیماری جنم لے رہی ہے. … ؟

کرونا وائرس تقریبا دنیا بھر میں پھیل چکا ہے. کرونا وائرس پر. قانو کرنے کے لیے ہر ملک میں کوششیں جاری ہیں. دنیا بھر میں لاک ڈاؤن ہے. لوگ گھروں میں قید ہو کر رہ گئے ہیں کرونا وائرس انتہائی تیزی سے پوری دنیا میں پھیلا ہے.

عالمی ادارہ صحت نے اس کو عالمی وبا قرار دیا کرونا وائرس کے حوالے سے ماہرین نفسیات کا کہنا ہے کہ اس وائرس کی وجہ سے لوگوں میں نے نفسیاتی مسائل پیدا ہو رہے ہیں اور وہ نفسیاتی بیماریوں کا شکار ہو رہے ہیں.

ماہرین کا کہنا ہے کہ لوگ کرونا فوبیا کا شکار ہوگئے ہیں اور ان میں ڈپریشن, کھانے پینے اور صحت کے دیگر مسائل پیدا ہورہے ہیں. اس وائرس سے لوگوں کی نیند بھی بہت زیادہ متاثر ہوئی ہے.

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس وائرس نے چونکہ لوگوں کی زندگیوں کو محدود کر دیا ہے. اور ان کی زندگی کے طور طریقے اچانک سے تبدیل ہو جانے کی وجہ سے ان کی نفسیات پر اثر پڑ رہا ہے. یہ ایک قدرتی عمل ہے کہ انسان ایک حد تک کسی بھی چیز کی قوت برداشت ہوتی ہے. کسی بھی چیز کی زیادتی اس کی صحت کے لیے نقصان دہ ہوتی ہے.

کرونا وائرس دنیا میں کب تک رہے گا… ؟ حیران کن انکشاف سامنے آگیا…!

ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ کسی بھی چیز سے مقابلے کے لئے انسان کی ذہنی صحت کا سب سے پہلے بہتر ہونا ضروری ہے. لیکن کرونا کی وجہ سے لوگوں میں نفسیاتی مسائل پیدا ہورہے ہیں اگر لوگوں کے نفسیاتی مسائل اسی طرح پڑھتے رہے تو کرونا پر قابو پانا بہت مشکل ہو جائے گا.

دماغ
Photo: File

لاک ڈاؤن کی وجہ سے لوگ ایک دوسرے سے مل جل نہیں رہے ایک دوسرے سے منقطع ہونے کی وجہ سے ان کی قوت مدافعت پر اثر پڑتا ہے اسی لیے لوگوں کی ذہنی قوت مدافعت بھی بہت کم ہورہی ہے، سماجی فاصلہ مغرب کا رواج ہے اور اس سے ذہنی مسائل بڑھتے ہیں ۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ تنہائی سے ذہنی کوفتیں بڑھ رہی ہیں جس کے سبب گھروں میں بند ہونے سے لوگ اندر ہی اندر گھٹ رہے ہیں ان کو چاہیے کے ٹیکنالوجی کے ذریعے آپس میں روابط قائم رکھیں۔

(Visited 129 times, 1 visits today)

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں