عقاب اپنی چونچ کیوں توڑ دیتا ہے؟

Loading...

عقاب ایک ایسا عظیم پرندہ ا ہے جو ایک شانِ اور بے نیازی سے آسمان میں بادلوں کو چیرتا ہوا اونچائی پر پرواز کرتا ہے۔ عقاب ہمیں قیادت کی بہترین مثال دیتا ہے۔ وہ اکیلا تین سو کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے آسمان میں اونچی سطح پر پُروقار اوربارعب اڑان بھرنے کی طاقت رکھتا ہے۔عقاب کی نظریں انسان کی نگاہوں سے پانچ گنا زیادہ تیز ہوتی ہیں۔ وہ دو میل کی دوری سے چیزوں کو دیکھ پاتا ہے۔عقاب مردارنہیں کھاتا بلکہ صرف تازہ خوراک پر اکتفا کرتا ہے۔ یہ بہترین شکاری خود اپنا شکار کرتا ہے۔ اپنے مضبوط پنجوں، طاقتور ٹانگوں اور مضوط چونچ سے لومڑیوں، بکریوں اور ہرنوں کو بھی نہیں بخشتا جن کا وزن عقاب سے آٹھ گنا زیادہ ہے۔

جب ایک مادہ عقاب ایک نر عقاب سے ملتی ہے تو وہ اس کی وفاداری کا امتحان لیتی ہے۔ وہ اونچائی پر ایک تنکے کو نیچے پھینکتی ہے اور نر اسے پکڑتا ہے۔ اس کے بعد وہ پھر اسے نیچے پھینکتی ہے اور وہ پھر اسے پکڑتا ہے۔ اس طرح وہ کئی بار ایسا کرتی رہتی ہے جب تک اسے اطمینان نہ ہو جائے کہ وہ اس نر عقاب کے ساتھ زندگی گزار سکتی ہے۔

Loading...

ضرورت مندوں کی مدد کرنے سے زندگی میں یہ تبدیلی آتی ہے… ماہرین کا انکشاف

عقاب اپنے بچوں کو تیار کرتے ہیں۔ وہ انہیں دس ہزار فٹ سے نیچے پھینکتے ہیں تاکہ بچے اپنے پر پھیلائیں اور اڑ سکیں۔ اگر وہ نیچے گریں گے تو انہیں پکڑ لیں گے۔ اور دوبارہ اونچائی سے گراتے جائیں گے جب تک وہ اڑنے کے قابل نہ ہو جائیں۔
یہ ذہین ترین پرندہ بہت جلد سکھانے سے سیکھ جاتا ہے اور اپنے مالک سے مکمل وفاداری بھی نبھاتا ہے۔ عقاب کی عمودی اڑان کا کوئی ثانی نہیں۔ یہ مردِ مومن اپنی خوداری، غیرت مندی اور جہدِ مسلسل سے انسانیت کو اپنے عروج تک پہنچنے کے لئے اکساتا ہے۔ اس کی تیزی، وسعتِ نظری اور دوربینی اور جلال پسندی خدا کی بہترین تخلیق کی دلیل ہے۔

جب عقاب چالیس سال کا ہو جاتا ہے تو اس کے پنجے تند ہو جاتے ہیں اور اس کی چونچ ٹیڑھی ہوجاتی ہے اور اس کے پر بھاری ہو جاتے ہیں اور سینے سے چپک جاتے ہیں۔ وہ پہاڑ پر چڑھ کر پتھر سے اپنی چونچ کو توڑتا ہے اور جب نئی چونچ آ جاتی ہے تو وہ اپنے ناخن اکھاڑتا ہے اور اس کے بعد اپنے پروں کو کریدتا ہے تاکہ ان میں نئے پر آجائیں۔ یہ تکلیف دہ مرحلہ پانچ مہینوں تک جاری و ساری رہتا ہے اور اس کے بعد عقاب میں نئے بال و پر، پنجے اور چونچ آ جاتے ہیں جن کے سہارے وہ مزید تیس سالوں تک زندہ رہتا ہے۔ عقاب ایک بے باک پرندہ ہے جس نے کئی معتبر شاعروں کو متاثر کیا ہے۔ یہ پرندہ شاید انسانوں کو اپنی صلاحیتیں یاد دلانے کے لئے خدا کی طرف سے زمین پر آیا ہے۔

(Visited 90 times, 1 visits today)
loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں