کرونا وائرس کا انسان کی عمر سے کیا تعلق ہے…. ؟

کرونا وائرس سے متعلق ریسرچ میں ماہرین یہ بات ثابت کر چکے ہیں کہ کرونا وائرس کا شکار ہونے والے شخص کی سونگھنے اور چکھنے کی حس مکمل طور پر ختم ہوسکتی ہے.

لیکن اب ماہرین نے ایک اور نیا انکشاف کیا ہے کہ سونگھنے اور چکھنے کی حس کا ختم ہونا جوان لوگوں میں زیادہ ہوتا ہے جبکہ عمر رسیدہ افراد نے یہ علامت بہت کم سامنے آئی ہے.

آئرلینڈ کے ماہرین نے اپنی سرچ میں یہ بتایا ہے کہ کرونا وائرس عمر رسیدہ اور جو ان لوگوں پر مختلف انداز سے اثرانداز ہوتا ہے.

ماہرین کا یہ کہنا ہے کہ جو لوگ عمر رسیدہ ہوتے ہیں ان میں کرونا وائرس کے منفی اثرات زیادہ سامنے آتے ہیں. جبکہ جوان لوگوں کی سونگھنے اور چکھنے کی حس زیادہ متاثر ہوتی ہے.

امریکن ماہرین نے کرونا وائرس کے متعلق نئی ریسرچ پیش کردی….!

عمر رسیدہ لوگوں کرونا وائرس سے شدید بخار اور کھانسی کی علامت سامنے آتی ہیں. ماہرین کا کہنا ہے کہ ہم نے اپنی ریسرچ میں 22 سے 46 سال کی عمر تک کے لوگوں کو شامل کیا.

اس عمر کے افراد کے لوگوں میں زیادہ تر سونگھنے اور چکھنے کی حس ختم ہوئی تھی جبکہ 46 سال کے زائد عمر کے لوگوں میں سونگھنے اور چکھنے کی حس کا ختم ہونا جیسی علامات کم سامنے آئی ہیں.

پوری دنیا میں نوول کرونا وائرس کے مصدقہ کیسز کی تعداد 1 کروڑ 72 لاکھ 95 ہزار 538 تک پہنچ گئی ہے، امریکہ 44 لاکھ 94 ہزار 601 مصدقہ کیسز کے ساتھ سرفہرست ہے،

Leave a Reply