سعودی شاہی خاندان کے درجنوں افراد بھی کورونا وائرس کا شکار

ریاض: امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق سعودی عرب کے شاہی خاندان سے تعلق رکھنے والے ’’درجنوں‘‘ افراد میں کورونا وائرس کا انکشاف ہوا ہے جن میں اہم سرکاری عہدیداران اور گورنر صاحبان تک شامل ہیں۔

امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق سعودی شاہی خاندان کے اراکین سمیت 150 افراد حالیہ ہفتے میں کورونا وائرس سے متاثر ہوئے ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہےکہ ریاض کے 70 سالہ گورنر شہزادہ فیصل بن بندر بن عبدالعزیز وائرس کے باعث انتہائی نگہداشت کے یونٹ (آئی سی یو) میں زیر علاج ہیں۔

اخبار نے اپنے نمائندگان ڈیوڈ کرک پیٹرک اور بین ہوبارڈ کے حوالے سے بتایا ہے کہ سعودی دارالحکومت ریاض میں ’’شاہ فیصل اسپیشلسٹ ہاسپٹل‘‘ کے سینئر ڈاکٹروں کے نام ایک ہدایت نامے میں کہا گیا ہے کہ وہ ’’تمام ملک سے وی آئی پی مریضوں کےلیے تیار رہیں۔‘‘

اس ہدایت نامے کے فوراً بعد ہی 500 سے زیادہ بستروں کو ’’وی آئی پی مریضوں‘‘ کےلیے تیار کرنا شروع کردیا گیا ہے۔ واضح رہے کہ مذکورہ اسپتال کا ایک بڑا حصہ صرف شاہی خاندان سے تعلق رکھنے والے افراد کے علاج معالجے کے لیے مخصوص ہے۔

رپورٹ کے مطابق 84 سالہ کنگ شاہ سلمان نے خود کو محفوظ رکھنے کے لیے جدہ کے قریب ایک جزیرے پر تنہائی اختیار کی ہے جب کہ ان کے بیٹے اور ولی عہد محمد بن سلمان بھی اپنی کئی وزرا کے ہمراہ اسی جزیرے پر محدود ہوگئے ہیں تاہم دونوں شخصیات وائرس سے متاثر نہیں ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہےکہ شاہی اراکین کا علاج کرنے والے اعلیٰ اسپتال کے ڈاکٹرز نے بتایا کہ متوقع کیسز کی بناء پر اسپتال میں مزید 500 بستر لگائے جارہے ہیں۔

loading...

رپورٹ کے مطابق سعودی عرب کے اعلیٰ ترین اسپتال کنگ شاہ فیصل اسپیشلسٹ اسپتال کو ایک ہائی الرٹ جاری کیا گیا ہے جس میں سینئر ڈاکٹرز کو ملک بھر سے اہم شخصیات کے لیے تیار رہنے کی ہدایت کی گئی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق ہائی الرٹ میں کہا گیا ہےکہ کیسز کی تعداد کا ابھی کوئی علم نہیں لیکن ہائی الرٹ رہا جائے۔

الرٹ میں مزید ہدایت دی گئی ہے کہ پرانے مریضوں کو فوری طور پر اسپتال سے فارغ کیا جائے اور صرف انتہائی اہم کیسز لیے جائیں۔

الرٹ میں کہا گیا ہےکہ کورونا سے متاثرہ کسی بھی اسٹاف ممبر کو کنگ شاہ فیصل میں نہیں رکھا جائے گا بلکہ اس کا علاج کسی دوسرے اسپتال میں کرایا جائے تاکہ ان اسپتال کے کمروں کو شاہی اراکین کے لیے محفوظ رکھا جاسکے۔

رپورٹ میں اس بات کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہےکہ ہزاروں سعودی شہزادے عام طور پر یورپی ممالک کا سفر کرتے ہیں اس لیے امکان ہے کہ وہ یورپ سے واپس سعودی عرب آنے پر وائرس میں مبتلا ہوئے ہوں گے۔

واضح رہے کہ سعودی عرب میں اب تک کورونا وائرس کے تقریباً 3 ہزار کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں اور 41 افراد جاں بحق ہوگئے ہیں جس کی وجہ سے سعودی حکومت نے ملک بھر میں جزوی کرفیو نافذ کررکھا ہے جب کہ جمعہ کے روز مکہ اور مدینہ میں مکمل کرفیو لگایا گیا۔

(Visited 19 times, 1 visits today)

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں