April 12, 2021

آج کل

Daily Aajkal News site

وبائی امراض

کرونا کے بعد اور کونسے وبائی امراض آسکتے ہیں… ؟

عالمی ادارہ صحت نے دنیا کو خبردار کیا ہے کہ تمام ممالک کو کرونا وائرس کی علاوہ دوسرے وبائی امراض کیلئے بھی تیار رہنا چاہیے. امریکی میڈیا کے مطابق عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس ایڈنوم کا کہنا ہے کہ میں آنے والے چند سالوں میں کئی دوسرے وبائی امراض سامنے آ سکتے ہیں.

اس لیے دنیا کو چاہیے کہ وہ پہلے ہی ان کا سامنا کرنے کے لیے تیار رہیں. دنیا نے اس سال بہت سے نشیب و فراز کا سامنا کیا ہے. انہوں نے کہا کہ گزشتہ موسم بہار میں کرونا وائرس کی وبا آنے سے پہلے ایسے متعدد جائزے اور اطلاعات سامنے آئیں جن میں کہا گیا تھا کہ دنیا ایسے حالات کے لیے تیار نہیں ہے۔

عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر جنرل نے کہا کہ تمام ممالک کو اپنی صلاحیتوں سے بھرپور طریقے سے استفادہ کرنا چاہئے اس لئے کہ تاریخ نے ہمیں بتایا ہے کہ یہ آخری وبائی بیماری نہیں ہے۔

کرونا سے متاثرہ شخص کب زیادہ تیزی سے دوسروں کو متاثر کرسکتا ہے۔۔۔؟

واضح رہے کہ اب تک دنیا بھر میں اب تک 8 کروڑ سے زیادہ افراد کرونا وائرس سے متاثر ہوئے ہیں جبکہ اس جان لیوا وبا سے 17 لاکھ 50 ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں کرونا کے متعلق ماہرین کا کہنا ہے کہ کرونا ویکسینیشن کا آغاز خوش آئند ہے لیکن یہ اس خطرناک وبا کے خلاف جنگ کے اختتام کا ابھی آغاز ہے، ابھی ویکسین کو دنیا کی آبادی کے بہت بڑے حصے کو لگنا باقی ہے اس لیے دنیا کو آئندہ 6 ماہ تک انتہائی محتاط رہنا ہوگا.

آبادی کی سطح پر کرونا وائرس کے خلاف مدافعت پیدا ہونے کا امکان 2021 کے آخر تک ہے تاہم اس سے پہلے ہمیں بہت احتیاط سے چلنا ہوگا۔

ماہرین نے کرونا کی نئی قسم کی دریافت پر کہا کہ ابھی چند مہینے نہایت خوفناک ہوسکتے ہیں لیکن ویکسین سے روشنی کی ایک امید ضرور نظر آئی ہے اور حالات بہتر ہونے کی امید بھی ہے لیکن اس میں ایک سال سے زیادہ کا عرصہ درکار ہے۔

%d bloggers like this: