کشمیر ہمارے لیے وہی حیثیت رکھتا ہے جو پاکستان کے لیے ہے، ترک صدر

ترک صدر

اسلام آباد: ترک صدر نے کہا ہے کہ ترک پاکستان تعلقات سب کے لئے قابل رشک ہیں، پاکستان آکرلگتا ہے اپنےگھرمیں ہی ہوں۔

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے ترک صدر رجب طیب اردوان نے خطاب کرتے ہوئے کہا محترم ایوان کو سلام پیش کرتا ہوں، مشترکہ اجلاس سے خطاب باعث فخر ہے، خطاب کا موقع فراہم کرنے پر شکر گزار ہوں، خود کو اپنے گھر میں محسوس کرتے ہیں۔

ترک صدر رجب طیب اردوان کی ایوان آمد پر ارکان نے کھڑے ہو کر استقبال کیا۔ مشترکہ اجلاس میں چاروں وزرائے اعلیٰ، گورنرز، آزاد کشمیر کے صدر، وزیراعظم اور سپیکر، غیر ملکی سفیر، مسلح افواج کے سربراہان شریک ہیں۔

واضح رہے کہ صدر رجب طیب اردوان کے ہمراہ کابینہ کے ارکان اور حکومت کے اعلیٰ عہدیداروں پر مشتمل ایک وفد کے علاوہ ترکی کی صف اول کی کارپوریشنوں کے سربراہ اور چیف ایگزیکٹو افسران بھی پاکستان آئے ہیں۔

وزیراعظم کی چیف سیکرٹری سندھ کو کراچی میں آٹے کی قیمت پر قابو پانے کی ہدایت

ترک صدر کے دورہ کے دوران دفاع، ریلوے، اطلاعات، تجارت اور دہری شہریت کے حوالے سے متعدد معاہدے ہوں گے۔ پاکستان اور ترکی کے تجارت اور سرمایہ کاری کے جوائنٹ ورکنگ گروپ نے مفاہمت کی دو یادداشتوں کو حتمی شکل دیدی، دونوں ایم او یوز پر دستخط ابتدائی اجلاس میں ہوں گے، گزشتہ روز مشترکہ ورکنگ گروپ کا اجلاس ہوا، وفود کے مابین تجارت اور سرمایہ کاری کے متعدد مواقع تلاش کرنے پر غور کیا گیا اور تجارتی سہولت اور کسٹم تعاون کے معاملات کی مفاہمتی یادداشتوں کو حتمی شکل دی گئی۔

loading...

گذشتہ روز رجب طیب اردوان کا پاکستان پہنچنے پر شایان شان استقبال کیا گیا ، نورخان ایئربیس پرمعزز مہمان کی راہ میں ریڈ کارپٹ بچھایا گیا ، وزیراعظم عمران خان نے نورخان ایئربیس پر مہمان صدر کو خوش آمدید کہا اور خود گاڑی ڈرائیو کرکے مہمان صدرکو وزیراعظم ہاؤس لائے، جہان ترک صدر کو گارڈ آف آنرپیش کیا گیا۔

بعد ازاں ترک صدر رجب طیب اردوان صدر مملکت سے ملاقات کے لیے ایوان صدر پہنچے ، جہاں صدر عارف علوی نے ترک ہم منصب اور خاتون اول کا استقبال کیا، ترک صدر اور اہلیہ نے بچوں کو پیار کیا ان کے ساتھ تصویربنوائی۔

پاک ترک صدور میں ون آن ون ملاقات بھی ہوئی ، جس کے بعد مہمان کے اعزاز میں پُر تکلف عشائیے کا اہتمام کیاگیا، عشائیے میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ ،اسپیکر قومی اسمبلی چیئرمین سینیٹ سمیت دیگر حکام شریک ہوئے

(Visited 18 times, 1 visits today)

Comments

comments

ترک صدر,

اپنا تبصرہ بھیجیں