ﻋﻮﺭت بلاوجہ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﻭﺗﯽ ہے ۔۔۔۔ ؟

Loading...

پرانے زمانے کی بات ہے کہ کسی ﻟﮍﮐﮯ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ماں ﺁﭖ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﻭﺗﯽ ﮨﯿﮟ؟ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﺮ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ : ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻋﻮﺭﺕ ﮨﻮﮞ۔

ﻟﮍﮐﺎ : ﻣﺠﮭﮯ آپ کی بات ﺳﻤﺠﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﯽ۔ ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﮔﻠﮯ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ : بیٹا ﺗﻢ ﺷﺎﯾﺪ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﭘﺎﺅ گے لڑکے کو جب کوئی تسلی بخش جواب نا ملا تو وہ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺑﺎ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ان سے ﭘﻮﭼﮭنے لگا : ﺍﺑﺎ ﺟﺎﻥ خواتین بلاوجہ کیوں ﺭﻭﺗﯽ ہیں جیسے میں نے ﺍﻣﯽ کو بغیر وجہ ﮐﮯ کئی بار ﺭﻭتے دیکھا ہے؟

باپ نے پوچھا بیٹا تمہیں کیسے پتہ کہ تمہاری ماں بلاوجہ ہی رو رہی تھیں ہو سکتا ہے ان کے پاس رونے کی کوئی وجہ ہو ؟ بیٹے نے جواب دیا نہیں اباجان میں نے جب ماں کو روتے دیکھا تو میں نے ان سے ان کے رونے کی وجہ پوچھی جس کے جواب میں انہوں نے مجھے بس کہا کچھ نہیں یونہی رونا آ گیا ۔ اور ابا جان ایسا اکثر ہوتا ہے میں جب بھی امی کو روتے دیکھتا ہوان تو وہی سوال کرتا ہوں اور امی ہر بار وہی جواب دیتی ہیں کہ بیٹا کچھ نہیں ۔ ﺑﺎﭖ نے جواب دیا ﺑﯿﭩﺎ ﺗﻤﺎﻡ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺑﻐﯿﺮ ﻭﺟﮧ ﮐﮯ ﺭﻭﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔

لڑکے کے لئے یہ کوئی تسلی بخش جواب نا تھا لیکن اب اس کے پاس جواب دینے والا بھی کوائی نہیں تھا ۔
اس ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻝ ﮔﺰﺭ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﺑﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻭﺟﮧ ﮐﮯ ﺭﻭﻧﮯ ﮐﻮ نہیں ﺳﻤﺠﮫ ﭘﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ پھر کافی وقت گزر جانے کے بعد اس لڑکے کو ﺍﯾﮏ ﺩﺍﻧﺎ ﺑﺰﺭﮒ ﮐﺎ ﭘﺘﮧ ﻟﮕﺎ۔ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺳﮯ بھی ﯾﮩﯽ ﺳﻮﺍﻝ کیا
آپ تو بزرگ ہیں آپ میرے ایک سوال کا جواب دیں جس کا جواب مجھے آج تک کوئی نہیں دے سکا ۔
بزرگ نے جواب دیا بیٹا بتاو کیا پوچھنا چاہتے ہو ؟
لڑکے نے جواب دیا آپ تو جانتے ہوں گے کہ عورتیں بلاوجہ کیوں روتی ہیں ؟

سرمہ لگانے کی سنت اور طبی تحقیقات …!

ﺍﻥ ﺑﺰﺭﮒِ ﺩﺍﻧﺎ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ : ﺑﯿﭩﺎ ﺟﺐ ﺍﻟﻠﮧ تبارک و تعالی ﻧﮯ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮐﻨﺪﮬﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺑﻮﺟﮫ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻧﺮﻡ ﺑﺎﺯﺅﻭﮞ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﮐﮧ  ﺍﻭﺭ ﺍس کو بے پناہ ﻗﻮﺕ ﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﻮﮐﮫ ﮐﺎ ﺑﻮﺟﮫ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﻨﻢ دے ﺳﮑﮯ.

loading...

ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺩﮬﺘﮑﺎﺭﮮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻏﻢ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ برداشت کر ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻭﮦ ﺧﺎﺹ ﻗﻮﺕ ﺑﮭﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﮯ ﻏﻤﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ سب گھر والوں ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮫ ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺳﺨﺖ ﺣﺎﻻﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﮑﻮہ ﺯﺑﺎﻥ ﭘﮧ ﻻﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﭘﮧ ﻣﻀﺒﻮﻃﯽ ﺳﮯ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮦ ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﻧﺎ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﯿﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﻮﺍﺯﺍ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﮐﺘﻨﯽ ﮨﯽ ﮔﺴﺘﺎﺥ ﺍﻭﺭ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻥ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﮨﻮ ﻭﮦ ﭘﻠﮏ ﺟﮭﭙﮑﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺍﺫﯾﺖ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ۔

ﺍﻭﺭ پھر ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮭﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﺩﺋﯿﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﮐﺒﮭﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﺗﮑﺎﻟﯿﻒ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﮑﻼﺕ ﺣﺪ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺑﻮﺟﮫ ﮐﻢ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ وہ روتی ہے تازہ وہ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺮﺏ اور اذیت ﮐﻮ ﮐﻢ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻧﺌﮯ ﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﻏﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﻨﺎ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﺍﺳﮑﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﻭﺍﺣﺪ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﻧﮑﺘﮧ ﮨﮯ۔

ﺍس ﻠﺌﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺍﻥ ﺁﻧﺴﻮﺅﮞ ﮐﻮ ﻋﺰﺕ ﺩﯾﻨﯽ ﭼﺎﮨﺌﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ مزا ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮌﺍﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﯿﮯ ﭼﺎﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﻭﺟﮧ ﮐﮯ ﮨ کیوں نا روتی ہو۔

زونیرہ شبیر

(Visited 53 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں