منیب بٹ نے پاکستان میں ارطغرل جیسے ڈرامے نہ بننے کی وجہ بتادی…!

منیب بٹ
Loading...

لاہور: پاکستان کے نوجوان اداکار منیب بٹ نے کہا کہ پاکستانی عوام کی وجہ سے ہی انڈسٹری میں ارطغرل جیسے ڈرامے نہیں بنتے کیوں کہ وہ جس چیز کو دیکھنا چاہتے ہیں ہم وہی بنانے پر مجبور ہوتے ہیں۔

پاکستان میں ترک ڈرامہ سیریل ’ارطغرل‘ کے نشر ہوتے ہی مقبولیت کی بلندیوں کو پہنچ گیا جس کے بعد عوام ملک میں بھی تاریخی واسلامی واقعات پر مبنی ڈرامے بنائے جانے کے حق میں بولتے دکھائی دیے۔

اس حوالے سے جب نوجوان اداکار منیب بٹ سے ایک انٹریو میں پوچھا گیا تو منیب بٹ نے کہا کہ پاکستان میں ارطغرل کی آمد کے بعد زیادہ تر لوگ پاکستانی انڈسٹری کے خلاف ہوگئے ہیں اور پاکستانی اداکاروں اور ڈراموں کو تنقید کا نشانہ بنارہے ہیں، اس حوالے سے میری ذاتی رائے یہ ہے کہ ’ارطغرل‘ جیسے ڈرامے بہت کم بنتے ہیں۔

اداکارہ ماہرہ خان نے ایک اور ایوارڈ اپنے نام کرلیا

منیب بٹ نے کہا کہ میں خود اس ڈرامے کا بہت بڑا مداح ہوں، مجھ سمیت میرے تمام گھر والے اس ڈرامے کو دیکھتے ہیں اور مجھے تو لگتا ہے کہ میرے گھر والوں نے میرا کوئی ڈرامہ اس طرح نہیں دیکھا جس طرح وہ سب ارطغرل دیکھ رہے ہوتے ہیں لیکن حققیت یہ ہے کہ اس ڈرامے کے بعد ایک لیول سیٹ ہوگیا ہے اور مداح اب تمام پاکستانی ڈراموں کو اسی پیمانے پر ناپ رہے ہیں۔

Loading...

نوجوان اداکار نے کہا کہ جس طرح کچھ عرصہ پہلے لوگوں پر ’میرے پاس تم ہو‘ جیسے ڈرامے کا بھوت سوار تھا اور اب ارطغرل آگیا، جو اچھی بات ہے لیکن اس کا نقصان یہ ہوا کہ اس کے بعد ہماری انڈسٹری پر انگلیاں اٹھائی جارہی ہیں کہ ہم لوگ ایسے تاریخی اور اسلامی واقعات پر مبنی ڈرامے کیوں نہیں بنارہے ہیں۔

منیب بٹ نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ لوگوں یہ بات سمجھانا بہت ضروری ہے کہ پاکستانی انڈسٹری پر جو تنقید ہورہی ہے اس میں صرف ہم قصوروار نہیں بلکہ عوام بھی اس میں برابر کے شریک ہیں کیوں کہ وہ جو چیز دیکھنا یا خریدنا چاہیں گے چینل مالکان وہی چیز دکھائیں گے اور ہمیں پتہ ہے لوگ کس قسم کا مواد دیکھنا چاہتے ہیں اس لیے ہمیں بھی وہی ڈرامے کرنے پڑتے ہیں، اگر لوگ دیکھنا بند کردیں گے تو ایسے ڈرامے بننا بھی بند ہوجائیں گے۔

نوجوان اداکار کا کہنا تھا کہ ہماری ٹی وی انڈسٹری میں جو چکربازی ہوتی ہے یعنی بہو کا کسی اور کے بہنوئی کے ساتھ چکر یا سسر کا بہو کے ساتھ چکر، مجھے بھی پسند نہیں اور یہ دیکھنے میں بھی بہت عجیب لگتے ہیں جب کہ معاشرے میں بہت کچھ ہورہا ہوتا ہے لیکن لازمی نہیں کہ سب کچھ دکھایا جائے، مگر عوام شاید دیکھنا ہی یہی چاہتے ہیں اس لیے ایسے ڈرامے مسلسل بنتے ہیں۔

(Visited 6 times, 1 visits today)
loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں