کے الیکٹرک کے خلاف سماعت : تاجروں نے بجلی کی نئی کمپنی بنانے کی پیشکش کردی

نیپرا نے
Loading...

کراچی: نیپرا کی عوامی سماعت میں شہری کے الیکٹرک کے خلاف پھٹ پڑے اور شدید نعرے بازی کی جس سے سماعت میں بدنظمی پیدا ہوگئی۔

کراچی کے مقامی ہوٹل میں نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) نے عوامی سماعت کی جس میں کراچی کے شہری کے الیکٹرک کے خلاف پھٹ پڑے اور شدید نعرے بازی کی۔

سماعت کے دوران چیئرمین نیپرا توصیف فاروقی نے کہا کہ ہم یہاں ابھی کوئی فیصلہ کرنے نہیں آئے ہیں، آج یہاں کراچی والوں کے مسائل سننے آئے ہیں اور سنگل پوائنٹ ایجنڈے پر کام کرنے آئے ہیں۔

چیئرمین نیپرا کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نے بھی کے الیکٹرک اور نیپرا کو ازخودنوٹس پر بلایا تھا، ہمارا فرض ہے کہ ان معاملات کو فوری دیکھیں، ہمارا کام صرف فیصلے دینا نہیں بلکہ تکنیکی مسائل بھی جانچنا ہے، اگر اچھی سروس نہیں دی جارہی ہےتواسےفوری دیکھنا ہمارا فرض ہے۔

چیئر مین نیپرا نے کے الیکٹرک کو مؤقف پیش کرنے کا موقع دیا تو سماعت میں شریک شہریوں نے کے الیکٹرک کے خلاف نعرے بازی کی جس سے سماعت میں تلخ کلامی بھی ہوا۔

Loading...

شہریوں نے احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ اگر ہمیں نہیں سنا جائے گا تو پھر سماعت کس لیے ہے۔ بدنظمی کے باعث چیئرمین نیپرا نے 30 منٹ کے لیے سماعت ملتوی کر دی اور تلخ کلامی کے بعد کے الیکٹرک کے سی ای او مونس علوی سماعت سے روانہ ہوگئے۔

موجودہ حکومت ماضی کی حکومتوں سے بھی زیادہ خراب حکومت ثابت ہوئی، سراج الحق

چیئرمین نیپرا نے کہا کہ جو منظم انداز میں نہیں بات کرے گا اسے ہال سے باہر نکال دیں جس پر شہریوں نے شدید شور شرابا کیا اور کہا کہ یہاں وقت ضائع کرنے کیلئے ہمیں بلوایا گیا، شہریوں نے ہال میں کے الیکڑک کے خلاف شدید نعرےبازی کی۔

چیف فنانس آفیسر کے الیکٹرک عامر غاضیانی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نیپرا عوامی مفاد میں یہ سماعت کررہا ہے اور ہم بھی عوامی مفاد پر ہی بات کرنا چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کراچی کے 40 فیصد علاقے پلاننگ کے تحت نہیں ہیں اور ان علاقوں سے ریکوری بہت مشکل ہے، جو صحیح علاقے اور مثتثنی ہیں وہاں تو ہم بھی بجلی فراہم کررہے ہیں۔

(Visited 17 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں