نواز شریف کی واپسی کیلئے برطانیہ جانا پڑا تو خود جاؤں گا: وزیراعظم عمران خان

وزیراعظم
Loading...

اسلام آباد : وزیراعظم عمران خان نے نواز شریف کی واپسی کیلئے ہر حد تک جانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ضرورت پڑی تو خود برطانیہ جاؤں گا اور برطانوی وزیراعظم سے بھی بات کروں گا۔

کیس بعد میں بنایا جاتا ہے گرفتار پہلے کرلیا جاتا ہے، مراد علی شاہ

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے نجی نیوز چینل کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے بڑا اعلان کیا اور کہا کہ : نوازشریف کی واپسی کیلئےبرطانیہ جانا پڑا تو خود جاؤں گا اور ضرورت پڑی تو برطانوی وزیراعظم بورس جانسن سےبات کروں گا۔

یاد رہے وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کے اجلاس میں نواز شریف کو ہر صورت وطن واپس لانے کا اصولی فیصلہ کرتے ہوئے کہا گیا تھا کہ برطانوی حکومت کی مدد سے نواز شریف کو واپس لائیں گے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا تھا کہ نواز شریف کو واپس لانے کیلئے قانونی آپشنز استعمال کئے جائیں، نواز شریف بیماری کا بہانہ بنا کر ملک سے بھاگےہیں، ان کو نواز شریف کو وطن واپس آکرعدالتوں کے سامنے پیش ہوناہوگا، کسی صورت این آر او نہیں ملے گا اور نہ کرپشن پر کسی کو کوئی معافی ملے گی۔

خیال رہے مشیر برائے داخلہ شہزاد اکبر نے برطانوی سیکریٹری داخلہ کو خط لکھا ، جس میں لوٹ مار کرنے والے نوازشریف کو ڈی پورٹ کرنے کی درخواست کردی ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق پاکستان نے خط میں کہا ہے کہ نوازشریف نے ملک میں لوٹ مار کی ، کرپشن کرنے والوں کے خلاف کارروائی میں ہماری مدد کی جائے اور برطانوی سیکریٹری داخلہ اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے نواز شریف کو وطن واپس بھیجیں اور ذمہ داری نبھاتے ہوئے انہیں ڈی پورٹ کریں۔

وزیر اعظم عمران خان کا خصوصی انٹرویو میں کہنا تھا کہ میں تو اقتدار میں نہیں تھا جب یہ سارے ملک سے بھاگے، نواز شریف نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کوبھگوایا ،سلمان شہباز بھاگا، ان کا کنہا ہے کہ ہم جتنی مرضی چوری کر یں،آپ ہاتھ نہیں لگا سکتے۔ ان سب کا ون پوائنٹ ایجنڈاہے کہ عمران خان پراتناپریشرڈالوکہ ہماری چوری کوچھوڑ دے،ان کو ملک کی معیشت کی کوئی فرک نہیں۔یہ اگر میری تعریف کریں تو میں اس کو اپنی توہین سمجھوں گا۔

ان کا کہنا تھا کہ لندن کے سب سے منہگے علاقوں میں ان کےمحلات ہیں،اب انہوں نے پریشر کا رخ فوج کی طرف موڑ دیاہے،جس دن سےمیں نےحلف لیا، اس دن سےیہ بلیک میل کررہےہیں،ان سے پوچھیں ان کے بیٹے کیوں بھاگے ہیں؟

loading...

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ ان سب کو جانتا ہوں یہ کیا تھے کیا بن گئے ہیں،اپنے گھر کو مقروض کر کے بھاگ گئے۔سوالوں کا جواب دینے کی بجائے ان کی کوشش ہے کہ عمران خان پر ڈباؤ ڈالو ۔شہباز شریف نے تو نہیں آنا تھا کورونا کی وجہ سے بھاگا آیا،اس کے خلاف ایسے ثبوت مل گئے ہیں ،یہ نہیں بچ پائے گا۔ یہ پچھلے دروازے سے کن کن سے ملتے ہیں سب معلوم ہے۔مقروض گھر کو ٹھیک کریں گے تو گھر والے تکلیف سے گزریں گے۔قوم سے کہتا ہوں میرا ساتھ دیں تاکہ ان مسائل کو حل کروں۔

بھارتی میڈیا فوج کیخلاف اور نواز شریف کی تعریفیں کر رہا ہے۔ اسرائیل تو 100 فیصد ان کےساتھ ہے، بھارتی میڈیاانتا خوش ہورہاہے،توسمجھ لیں کہ پاکستان کی بہتری کس میں ہے۔ ان کامقصد ہےکہ عمران خان کوگراناہے،کیوں گراناہےکیونکہ ان کی باری آئیگی۔

وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ خراب سسٹم کو ٹھیک کرنے میں وقت لگتاہے، 30 سال سے بیورو کریسی میں گند ڈالاگیا ، کیا میں بٹن دباؤ گا اورسب ٹھیک ہوجائیگا۔ ہمیں مشکل ہورہی ہے ان کا گند صاف کرنے میں ، یہ وہ لوگ ہیں یاپاکستان بچےگایا یہ لوگ بچیں گے۔ پیپلزپارٹی اورن لیگ نے پی آئی اے میں بھرتیاں کرکرکے برا حال کردیا، عمران خان پاور میں رہے یا نہ رہے ، ان چوروں کو واپس نہیں آنے دے گا۔

ہماری بجلی بھارت اور بنگلا دیش سے25فیصد منہگی ہے، بجلی کے معاہدے پر ہم نے تو سائن نہیں کئے ، گذشتہ حکومتوں نے معاہدوں سے پیسا بنایا اور بوجھ سارا ہم پر پڑ گیا۔ان سےبات چیت کاکوئی فائدہ نہیں،ان کو این آر او دینگےتو ملک تباہ ہوجائیگا۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ اقتدارمیں نہ بھی ہوں، یہ واپس آئےتو ان کیخلاف قوم کوسڑکوں پر نکالوں گا،یہ جوزبان استعمال کررہےہیں فوج کیخلاف ایسےتو دشمن بھی نہیں کرتا، جنرل باجوہ کو ان سے ملنا ہی نہیں چاہیےتھا، مشرف نے ان دونوں کو این آر او دیکر ملک کےساتھ ظلم کیا،ان دو این آر او نے ملک کا بیڑا غرق کر دیا۔
ہم نے جب ان کو این آر او دینا ہی نہیں تو مذاکرات کیسے کریں،کلثوم نواز، وکیل نکلے جج نکلے احتجاج کیلئے تومشرف نے دباؤمیں آکر این آراودےدیا،کسی کی جرات نہیں ہوئی کہ مجھ سےکہے کہ ان کوچھوڑ دیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ایجنسیوں کا کام وزیراعظم کی حفاظت کیلئےنگرانی کرنابھی ہوتاہے،یہ چاہتے ہیں کہ ملٹری پنجاب پولیس بن جائے، یایہ جومرضی کریں کچھ نہ کہاجائے،پہلی دفعہ سول ملٹری تعلقات ایک ہی پیج پر ہیں،بینڈل آئی لینڈ اور راوی سٹی دو بہترین منصوبےہیں، بینڈل آئی لینڈ کا فائدہ سندھ کے لوگوں کو ہوگا، آئی لینڈ کیوجہ سے40ارب ڈالر کافارن ایکس چینج ملک میں آئےگا، راوی سٹی سے لاہور بچ جائےگا۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ بیرون ملک پاکستانی مجھ پر اعتماد رکھتے ہیں، سندھ حکومت کو ہمارا شکریہ ادا کرنا چاہیے، سندھ حکومت نے بنڈل آئی لینڈ کبھی نہیں بنانا تھا ، کیونکہ بیرون ملک پاکستانی ان پراعتمادنہیں کرتے،اس منصوبے سے سارے پاکستان کا فائدہ ہے۔ جزائر سے متعلق پروپیگنڈا گمراہ کن ہے ، فشریز پلانٹ لگنے سے مچھیروں کو مالی فوائد ہوں گے ۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ میں مشکل وقت سے نکلا ہوں، جدوجہد کی ہے،ان کا واسطہ ایسے شخص سے پڑ گیا ہے جو مقابلہ کرنا جانتاہے۔جو آدمی جد و جہد کرکے آیا ہے ، اس کو ان سے کیسا ڈرہوگا؟ہم کہہ رہےہیں کہ برطانیہ سے نواز شریف کو ڈی پورٹ کیا جائے،ہماری پوری کوشش ہےکہ نواز شریف کولندن سے ڈی پورٹ کرائیں،اگر ضرورت پڑی تو میں برطانوی وزیراعظم بورس جانسن سےبھی بات کروں گا،مجھے پتا ہونا چاہیےتھا کہ نواز شریف نے ساری زندگی جھوٹ بولا ہے،ہم نواز شریف کو واپس لائیں گے اور جیل میں ڈالیں گے۔

وزیر اعظم کا مزید کہنا تھا کہ اپوزیشن نے سول ملٹری تعلقات خراب کرنے کی کوشش کی،فوج اور حکومت ایک پیج پر ہیں، اپوزیشن کو کسی طور پر این آر او نہیں ملے گا۔کرپشن لوٹ مار کرنے والوں کا احتساب جاری رہے گا۔قانونی ٹیم کونوازشریف کی واپسی کیلیے تمام فورمز استعمال کرنے کی ہدایت کردی۔ ملک وقوم کا پیسا لوٹنے والوں کیخلاف احتساب کے عمل کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے۔ ان کے سارے کیسز ہماری حکومت سے پہلے کے ہیں،صرف شہبازشریف کیخلاف ٹی ٹی کیس ایسٹ ریکوری یونٹ لےکرآیا۔ یہ مجھ پر دباو ڈال رہےہیں کہ نیب کیسز ختم کردوں۔ نیب اور عدالتیں ہمارے ہاتھ میں نہیں ہیں، پاکستان کے خلاف بین الاقوامی لابی اپوزیشن کی بھرپور حمایت کر رہی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ پنجاب میں تمام غریب طبقے کوہیلتھ کارڈ دیں گے، چینی اور آٹا منہگا ہونے سے مجھے بہت تکلیف ہوئی، دو باربارشوں کی وجہ سے گندم کی فصل متاثرہوئی، وہ ادارہ جس نے بتاناتھا کہ پیداوارکم ہوئی ہے، وہ کام ہی نہیں کررہاتھا۔ قوم پر اس طرح کی منہگائی دوبارہ نہیں آنے دیں گے۔زرعات کا محکمہ وفاق کےپاس ہوناچاہیے، 18ویں ترمیم کیوجہ سےزراعت کامحکمہ صوبوں کےپاس چلاگیا۔ الیکشن ہو ا تو میں پھر اکثریت سے آوں گا۔

(Visited 27 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں