بولرز اچھی گیندیں کر رہے ہیں، بس ایک جیت کی ضرورت ہے، سہیل اختر

لاہور قلندرز کے کپتان سہیل اختر کا کہنا ہے ہماری ٹیم بدقسمت رہی ہے لیکن جیت کے ٹریک پر آنے کے لیے صرف ایک فتح درکار ہے۔

‏لاہور قلندرز کی ٹیم پہلی مرتبہ ہوم گراؤنڈ پر اپنے ہوم کراؤڈ کے سامنے کھیل رہی ہے لیکن وہ پھر بھی اپنے فینز کو خوشیاں نہ دے سکی۔

قذافی اسٹیڈیم میں لاہور قلندرز کو پہلے میچ میں ملتان سلطانز نے پانچ وکٹوں سے شکست کا مزہ چکھایا تو دوسرے میچ میں اسلام آباد یونائیٹڈ نے سنسنی خیز مقابلے میں ایک وکٹ سے شکست دی۔

پی ایس ایل کے پہلے چار ایڈیشنز کی طرح پانچویں ایڈیشن میں جہاں اب تک لاہور قلندرز کی قسمت نہیں بدل سکی وہاں اس کی سوشل میڈیا پر ٹرولنگ کا ایک نہ ختم ہونے والا سلسلہ بھی جاری ہے۔

اس کے علاوہ ٹیم کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ کوئی کمبی نیشن میں کیڑے نکال رہا ہے تو کوئی ہیڈ کوچ عاقب جاوید کو مورد الزام ٹھہرا رہا ہے جب کہ کچھ کا خیال ہے کہ کپتان سہیل اختر اپنا امپیکٹ چھوڑنے میں ناکام رہے ہیں، وہ بھی ناتجربہ کار ہیں اور ان کی شخصیت اور رعب بھی کپتانوں والا نہیں ہے، ایسے میں وہ لیڈ فرام دی فرنٹ کی صلاحیت نہیں رکھتے۔

پی ایس ایل کی دو ٹیموں پر جرمانہ

ٹیم جب ہار رہی ہو تو ایسیی باتیں سننے کو ملتی ہی ہیں لیکن لاہور قلندرز کے کپتان سہیل اختر کہتے ہیں کہ لاہور قلندرز کی ٹیم بدقسمت رہی ہے۔

سہیل اختر کا کہنا ہے کہ بیٹسمینوں نے جارحانہ بیٹنگ کی، پارٹنر شپ بھی ہوئیں، بورڈ پر اچھا اسکور بھی لگانے میں کامیاب رہے، بولرز نے بھی مشکل کنڈیشنز میں عمدہ بولنگ کی۔

loading...

انہوں نے کہا کہ گیند گیلا ہو رہا تھا لیکن اس کے باوجود شاہین آفریدی اور ڈیوڈ ویس نے شاندار بولنگ کی، اس کے باوجود ہار گئے جس سے مایوسی ہوئی۔

کپتان لاہور قلندرز نے کہا کہ ٹی ٹوئنٹی میں آخری میچ تک کچھ نہیں کہا جا سکتا، موسیٰ خان اور احمد صفی کو کریڈٹ جاتا ہے جنہوں نے آخری وکٹ پر جاندار بیٹنگ کی اور میچ ہم سے لے گئے، ہمارا اسکوار اچھا تھا جو میچ آخری اوور تک گیا۔

سہیل اختر نے کہا سمجھتا ہوں کہ اسلام آباد یونائیٹڈ کے خلاف یہ میچ پی ایس ایل کا اب تک کا بہترین میچ ہے۔

ان کا کہنا ہے دو میچوں میں شکست کے باوجود پُر امید ہیں، اس ہار کے باوجود بھی مثبت ہیں کیونکہ بیٹسمین اچھے رنز کر رہے ہیں اور بولرز بھی اچھی گیندیں کر رہے ہیں، بس ایک جیت کی ضرورت ہے۔ لاہور قلندرز کے کپتان کا کہنا تھا وننگ ٹریک پر آجائیں گے، ابھی ٹورنامنٹ میں 8 میچز پڑے ہوئے ہیں، ہم مضبوط طریقے سے کم بیک کریں گے۔

محمد حفیظ کی تعریف کرتے ہوئے سہیل اختر نے کہا کہ بابر اعظم کے بعد محمد حفیظ پاکستان کے سب سے بہترین بییٹسمین ہیں، وہ لاہور قلندرز کے سرکردہ کھلاڑی ہیں، ان سے اسی طرح کی کارکردگی کی توقع ہے۔

سہیل اختر کہتے ہیں کہ لاہور قلندرز کا کمبی نیشن بنا ہوا ہے، ایسے میں سلمان بٹ کی ابھی ٹیم میں جگہ نہیں بنتی۔

(Visited 12 times, 1 visits today)

Comments

comments

سہیل اختر,

اپنا تبصرہ بھیجیں