پی ایس ایل کیلئے بھارتیوں کی خدمات کیوں حاصل کی گئیں؟

پی ایس

لاہور : پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کیلئے بھارتیوں کی خدمات حاصل کرنے پر وضاحت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایونٹ کے کامیاب انعقاد کو یقینی بنانے کیلئے مختلف ملکوں، خطوں اور ثقافت سے تعلق رکھنے والے افراد کام کر رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پی ایس ایل سیزن فائیو کی افتتاحی تقریب کی ڈائریکٹر بھارتی خاتون کو بنانے پر پی سی بی کو تنقید کا سامنا ہے جس پر وضاحت پیش کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ایونٹ کے دوران جہاں بہت سے مثبت پہلو سامنے آئے وہاں کچھ مواقع پر بہتری لانے کی نشاندہی بھی کی گئی ہے لیکن یہ سب ہرگز غیر متوقع نہیں کیونکہ پاکستان کی تاریخ میں یہ سب سے بڑا کرکٹ ایونٹ ہے۔

متحدہ عرب امارات (یو اے ای) میں آپریشنل اور لاجسٹک معاملات کے دوران مشکلات کا اندیشہ کم رہتا تھا اور پاکستان میں طویل عرصے بعد پہلی مرتبہ اتنا بڑا ایونٹ ہو رہا ہے جس کی افتتاحی تقریب کو کچھ شائقین نے ناپسند کیا تو بڑی تعداد نے سراہا بھی تاہم پی سی بی اپنی خامیوں سے سیکھنے کے عمل پر یقین رکھتا ہے، جہاں تک لوگوں کی شہریت کا معاملہ ہے تو ایونٹ کے کامیاب انعقاد کو یقینی بنانے کیلئے مختلف ملکوں، خطوں اور ثقافت سے تعلق رکھنے والے افراد کام کررہے ہیں۔

پی سی بی نے بال ٹیمپرنگ کا الزام مسترد کر دیا

پی سی بی نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اعلیٰ ٹیکنالوجی کی براڈکاسٹ کیلئے مقامی ذرائع دستیاب نہیں ہیں اور اس حوالے سے پی سی بی نے دو شراکت دار کمپنیوں سے معاہدہ کررکھا ہے، کہیں مایوسی ضرور ہوگی مگر ایک بات واضح ہے کہ پی ایس ایل اس ملک کی لیگ اور پہلی بار تمام میچز پاکستان کے 4 شہروں میں کھیلے جارہے ہیں، پی ایس ایل کے کامیاب انعقاد کو یقینی بنانے کیلئے تمام مداحوں سے شانہ بشانہ کھڑے ہونے کی درخواست کرتے ہیں۔

واضح رہے کہ پی ایس ایل کے پانچویں ایڈیشن کی افتتاحی تقریب کیلئے 130بھارتیوں کی خدمات حاصل کرنے پر پی سی بی کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا گیا تھا کہ اپنے ملک کے لوگوں کو موقع کیوں نہیں دیا گیا، اس کے علاوہ شائقین کی بڑی تعداد نے افتتاحی تقریب کو بھی بے رنگ قرار دیتے ہوئے تنقید کی ہے۔

(Visited 19 times, 1 visits today)

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں