کرونا واﺋﺮس 34 منٹ میں ختم ہوسکتا ہے, امریکی ماہرین کا نیا دعویٰ

کرونا وائرس کا
Loading...

امریکن ماہرین نے کرونا وائرس کے متعلق ایک حیران کن دعویٰ کردیا ہے.

ان ماہرین کا دعویٰ ہے کہ ہم نے ریسرچ اور مطالعے سے یہ بات معلوم کی ہے کہ کرونا وائرس کو سورج کی تیز شعاعیں صرف اور صرف 34 منٹ میں ختم کر سکتی ہیں.

ماہرین نے اپنی رپورٹ میں یہ بھی کہا ہے کہ برطانیہ میں درجہ حرارت بڑھ رہا ہے. درجہ حرارت بڑھنے سے کرونا وائرس میں کمی آنے کا بھی امکان ہے. ماہرین کا دعویٰ ہے کہ سورج کی تیز شعاعیں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو کم کر دے گی اور اس میں کمی آنے سے ملک میں کرونا وائرس کا رسک بہت کم ہو جائے گا. شہری آرام سے سن باتھ لے سکتے ہیں. جس سے ان کی قوت مدافعت میں بہتری آئے گی.

ماہرین نے مزید کہا کہ برطانیہ کے علاوہ دنیا کے دیگر ممالک میں بھی سورج کی تیز شعاعیں کرونا وائرس میں کمی لاسکتی ہیں لیکن بہت سے دوسرے ماہرین اس بات سے اتفاق نہیں کرتے. ان کا کہنا ہے کہ ہم اس پر کوئی حتمی رائے قائم نہیں کر سکتے کہ سورج کی شعاعوں سے کرونا وائرس کے پھیلاؤ میں کمی آئے گی.

loading...

کرونا وائرس اس جگہ 20 سال تک زندہ رہ سکتا ہے…. ؟

اس سے پہلے بھی کئی ماہرین اس بات کا دعویٰ کر چکے ہیں کہ سورج کی شعاعیں کرونا وائرس کی وبا کو ختم کر سکتی ہیں اور موسم گرما شروع ہوتے ہی کرونا وائرس ختم ہو جائے گا لیکن ایسا نہیں ہوا.

اب تک دنیا بھر میں کرونا وائرس کے 95 لاکھ 35 ہزار 219 کیسز سامنے آچکے ہیں جبکہ 4 لاکھ 85 ہزار سے زائد افراد اس وائرس کے ہاتھوں موت کے منہ میں جا چکے ہیں۔

(Visited 57 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں