وہ یورپی ملک جہاں ہم جنس پرستوں کے خلاف ’اعلانِ جنگ‘ کردیا گیا

جنس پرستوں

وارسا : یورپی ملک پولینڈ ایک تہائی آبادی نے خود کو ہم جنس پرستی سے پاک قرار دے دیا، 100 کے قریب لوکل اور میونسپل حکومتوں نے عہد کیا ہے کہ وہ ہم جنس پرستوں کیلئے برداشت کا سبق دینے والے عناصر سے دور رہیں گے اور ان کی کسی قسم کی سرپرستی نہیں کریں گے۔

لوکل اور میونسپل حکومتوں نے یہ بھی عہد کیا ہے کہ وہ ایسی کسی بھی تنظیم کو فنڈز جاری نہیں کریں گی جو ہم جنس پرستوں کو برابری کے حقوق دلانے کیلئے کام کرتی ہیں۔ ہم جنس پرستوں کے خلاف متحرک لوگوں نے ملک کا ایک نقشہ بھی جاری کیا ہے جس میں اس حصے کو سرخ کیا گیا ہے جہاں کے لوگ خود کو ’ایل جی بی ٹی فری زون‘ قرار دیتے ہیں، یہ ہنگری کے مجموعی رقبے سے بھی زیادہ بڑا علاقہ ہے۔

ہم جنس پرستوں کا انوکھا احتجاج…

پولینڈ کی حکمران کنزر ویٹو پارٹی لاءاینڈ جسٹس نے ہم جنس پرستی کے خلاف گزشتہ برس مارچ میں باضابطہ مہم کا آغاز کیا تھا، یورپی یونین کی جانب سے ہم جنس پرستوں کے ساتھ امتیازی سلوک کے بارے میں وارننگز بھی جاری کی گئی تھیں لیکن تمام تر مخالفت کے باوجود گزشتہ برس اکتوبر میں ہونے والے الیکشن میں لاءاینڈ جسٹس پارٹی نے بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کی
جس کے بعد سے ہم جنس کے خلاف عوامی جذبات میں شدت آئی ہے اور اب ایک تہائی ملک خود کو ایل جی بی ٹی ( لیزبین، گے، بائی سیکسوئل، ٹرانسجینڈر)فری زون قرار دے چکا ہے۔

(Visited 40 times, 1 visits today)
loading...

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں