کورونا کی میت سے زندہ انسانوں میں منتقلی کے شواہد نہیں ملے، ڈاکٹر ظفر مرزا

ڈاکٹر ظفر مرزا

اسلام آباد: وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر ظفر مرزا کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس میت سےزندہ انسانوں میں منتقل ہونے کےشواہد نہیں ملے۔

ملک میں کورونا وائرس کی وبا سے متعلق تفصیلات کے بارے میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عوام احتیاطی تدابیر اختیار کرنے میں غفلت نہ برتیں، آئندہ آنے والے دنوں میں کورونا وائرس کے کیسز اور اس کے باعث ہونے والی اموات میں اضافہ ہوگا۔  احتیاط وائرس سے بچاو کیلئے ضروری ہے۔ کئی مرتبہ بڑے شہروں کے بڑے اسپتالوں میں بستر اور وینٹی لیٹرز نہیں ملتے۔ تاحال اس دست یاب بستروں اور وینٹی لینٹرز کی تعداد قابو میں ہے۔ اس وقت صرف 18 سے 20 فی صد وینٹی لیٹر ہی زیر استعمال ہیں۔ ڈاکٹر ظفر مرزا کا کہنا تھا کہ کورونا وائرس کے میت سے زندہ انسانوں میں منتقلی کے شواہد نہیں ملے ہیں اسی لیے وبا سے انتقال کرنے والوں کی تدفین کے لیے نیا ہدایت نامہ جاری کردیا گیا ہے۔ تاہم متاثرہ شخص کی تجہیز و تکفین کرنے والوں کے لیے حفاظتی لباس پہننا اور احتیاط کرنا لازمی ہے۔

اگر وفاق چاہے تو تعلیمی اداروں کی مالی مدد کر سکتا ہے، سعید غنی

انہوں ںے کہا کہ عید کے باعث ٹیسٹنگ سست ہوئی تھی تاہم اب دوبارہ اس کی رفتار بڑھائی جائے گی۔ پاکستان میں کورونا وائرس سے متاثر ہونے والوں کی 35 فی صد تعداد صحت یاب ہوچکی ہے۔

loading...

انہوں نے مزید بتایا کہ جمعے کے روز پاکستان میں کورونا وائرس کے باعث سب سے زیادہ اموات سامنے آئیں اور اس ایک دن کے اندر 57 افراد جان کی بازی ہار گئے جس کے بعد اموات کی مجموعی تعداد 1 ہزار 3 سو 57 تک جا پہنچی ہے جب کہ متاثرین کی تعداد 64 ہزار سے تجاوز کرچکی ہے۔

(Visited 17 times, 1 visits today)

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں