April 12, 2021

آج کل

Daily Aajkal News site

لیپ ٹاپ کی بیٹری لائف کیسے بڑھائی جا سکتی ہے؟

لیپ ٹاپ کا استعمال کرنے والے ایک عام سوال اکثر پوچھتے ہیں کہ اس کی بیٹری لائف کو کیسے بڑھایا جائے یا کم از کم اس کے بار بار ختم ہونے کو کیسے کم کیا جائے۔تو آئیے آج ہم آُپ کو بتاتے ہیں کہ آپ کیسے اس مسئلے کو حل کر سکتے ہیں۔۔۔

وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ تمام بیٹریاں خراب ہوتی ہیں لیکن بہت سے لیپ ٹاپ استعمال کرنے والے صارفین یہ سوال کرتے ہیں کہ کس بیٹری کی لائف کو بڑھایا جا سکتا ہے۔ کیا استعمال کم کرنے یا چارجنگ پر کم زیادہ لگانے سے بیٹری کی کارکردگی میں کوئی فرق آ سکتا ہے ۔اگر ایسا ہے تو ہم بیٹریوں کو کیسے استعمال کریں؟ کیا ہم انھیں ہر وقت سو فیصد چارج رکھیں یا ان کے چارجنگ لیول کے مطابق انھیں بجلی کے پلگ سے لگاتے اور ہٹاتے رہیں۔

موبائل فونز اور لیپ ٹاپ کمپیوٹرز کی بیٹریاں زیادہ تر لیتھیم سے تیار کردہ ہوتی ہیں۔ بیٹری لائف کی ٹیکنالوجی ہر نسل کے ساتھ بہتر سے بہتر ہوتی گئی ہے۔ دس سال پہلے لیپ ٹاپ بیٹریوں کی کارکردگی چند سو مرتبہ چارج کرنے کے بعد کم ہونا شروع ہوجاتی تھی۔لیکن اب لیپ ٹاپ بیٹریوں کی کارکردگی عمومی طور پر تین سے پانچ برس تک کام کرتی ہے جس دوران اس کو پانچ سو سے ایک ہزار مرتبہ چارج کیا جا سکتا ہے۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ ” اپنے لیپ ٹاپ کو ہر وقت بجلی کے ساتھ لگائے رکھنا اور بیٹری کو ہر وقت سو فیصد چارج رکھنا بالکل محفوظ اور عام بات ہے”۔ لینووو یا دیگر کمپنیوں کے تیارکردہ لیپ ٹاپ کمپیوٹروں میں ایسے سینسرر اور کنٹرول لاجک کا استعمال کیا جاتا ہے جس سے یہ یقینی بنایا جا سکے کہ لیپ ٹاپ کی بیٹری اوور چارج یا زیادہ گرم نہ ہو۔تاہم بیٹری کو ہر وقت چارج پر رکھنا اور سو فیصد رکھنے سے اس کی لائف میں کچھ کمی ہو جاتی ہے۔اگر بیٹریوں کو ہر وقت چارجنگ پر رکھا جائے خصوصاً گرم درجہ حرارت میں تو ان کی کارکردگی میں معمول کے مقابلے میں تیزی سے کمی آتی ہے اور ان کی بیٹری لائف کم ہوتی ہے۔

ایسا اس لیے ہے کیونکہ جب کوئی بھی بیٹری سو فیصد چارج ہوتی ہے تو اس کے سب سے زیادہ اعلیٰ کنڈیشن ہوتی ہے کیونکہ زیادہ توانائی کی وجہ سے اس کے وولٹیج بھی زیادہ ہوتے ہیں۔

کمپیوٹر بنانے والی ٹیکنالوجی کمپنی ایچ پی بھی ایسا ہی سمجھتی ہے۔ ایچ پی کمپنی کا کہنا ہے کہ ‘آج کل کی بیشتر بیٹریوں میں جب وہ سو فیصد چارج ہو جائیں تو اوور چارجنگ روکنے کی ٹیکنالوجی موجود ہوتی ہے لیکن یہ ٹیکنالوجی بجلی کے زیادہ وولٹیج کو کنٹرول نہیں کر سکتی جو بیٹری پر اضافی دباؤ کی وجہ بنتا ہے اور اس کی کارکردگی کو مقررہ وقت سے پہلے متاثر کرتا ہے۔

لہذا اگر آپ اپنے لیپ ٹاپ یا کسی اور ڈیوائس کی بیٹری کو سو فیصد چارج ہونے سے قبل ہی چارجنگ سے اتار لیں گے تو یقیناً آپ کی بیٹری زیادہ دیر چلے گی۔ماہرین کی سفارش یہ ہے کہ لیپ ٹاپ کو مکمل طور پر چارج رہنے کے وقت کو محدود کر دیں یا جب بھی آپ اسے بجلی کے پلگ میں لگائیں تو اس کی بیٹری کو سو فیصد تک چارج کرنے کے بجائے، صرف 80 فیصد تک چارج کریں۔

%d bloggers like this: