May 18, 2021

آج کل

Daily Aajkal News site

رمضان المبارک کے دوران ان عادات سے پرہیز کریں

رمضان المبارک میں اکثر ہم اس سوچ میں مبتلا رہتے ہیں کہ ہماری ایسی کونسی عادات ہیں جن سے ہمیں

احتیاط کرنی چاہیے یا اپنانی چاہیں۔رمضان کے مہینے میں خود کو ڈھالنے اور روٹین کو بہتر بنانے کا بہترین

وقت ہے ۔

رمضان المبارک کا یہ ایک ماہ گزرتے پتا ہی نہیں چلتا، اسی لیے رمضان سے متعلق منصوبہ بندی کرنا ضروری ہے اور چند مضر صحت عادات سے چھٹکارہ حاصل کر کے اسے مزید فائدہ مند بنایا جا سکتا ہے۔آئیے ہم آپ کو بتاتے ہیں۔۔۔

رمضان کے مہینے میں سب سے زیادہ نیند کے اوقات خراب ہوتی ہے۔ اکثر افراد رمضان کے مہینے میں ہر وقت نیند میں نڈھال نظر آتے ہیں جبکہ پیشگی منصوبہ بندی سے اس مسئلے کو حل کیا جا سکتا ہے۔ رمضان کے مہینے میں چند عادات سے پرہیز کر کے اس مہینے کو با آسانی اور خوش اسلوبی سے گزارا جا سکتا ہے۔

سب سے پہلے تو کھانے کے فوراً بعد سونے والی عادت سے چھٹکارا حاصل کرنا چاہئیے یہ عادت انسانی صحت کے لیے نہایت مضر صحت عادت قرار دی جاتی ہے، رمضان میں یہ عادت اس لیے زیادہ نقصان دہ ثابت ہوتی ہے کیوں کہ ہمارے جسم کو کھانا بہت دیر بعد ملتا ہے جسے ہضم اور جذب ہونے میں وقت درکار ہوتا ہے،جلدی سونے سے بد ہضمی،پیٹ میں گیس، بوجھل پن اور تھکاوٹ بڑھ جاتی ہے، مزید اس عادت سے وزن میں اضافہ اور دل کی بیماریوں کا سامنا بھی کرنا پڑ سکتا ہے۔

رمضان المبارک میں اکثر لوگ یہ سوچتے ہیں کہ تازہ دم رہنے یا سحری تک جاگنے کے لئے کافی یا چائے کی مدد لیتے ہیں، ان مشروبات میں کیفین زیادہ مواد میں پائی جاتی ہے، ماہرین کا کہنا ہے کہ زیادہ کافی یا چائے پینے سے انسانی جسم میں محفوظ پانی خارج ہو جاتا ہے اور انسان بہت جلد ڈی ہائیڈریشن کا شکار ہو سکتا ہے۔

چکنائی والی غذاوں کا زیادہ استعمال بھی نقصان دہ ثابت ہوتا ہے، ماہرین کی جانب سے چکنائی کی کم سے کم مقدار کا استعمال تجویز کیا جاتا ہے، رمضان کے دوران صرف دو وقت کے کھانے کے دوران جب اچانک مرغن غذاؤں کا استعمال شروع کر دیا جائے تو جسمانی نظام غیر متوازن ہو جاتا ہے جس کے نتیجے میں بلڈ پریشر، شوگر اور کولیسٹرول لیول بڑھنے کے نتیجے میں روزہ دار بہت جَلد بیمار پڑ سکتا ہے۔

رمضان کے دوران خود کو متحرک نہ رکھنا یا چہل قدمی نہ کرنا بھی انسانی صحت کیلئے نقصان دہ ہو سکتا ہے، رمضان کے مہینے میں ورزش کرنے سے دوگنے فوائد حاصل ہو سکتے ہیں جبکہ سب سے بڑھ کر انسان خود کو متحرک اور چاق چوبند محسوس کرتا ہے اور غذا بھی با آسانی ہضم ہو جاتی ہے، معدے کی کارکردگی بہتر ہو جاتی ہے۔