ڈونلڈ ٹرمپ کے حامیوں نے پارلیمنٹ کی عمارت پر دھاوا بول دیا, 4 افراد ہلاک 52 گرفتار

کانگریس
Loading...

واشنگٹن: صدر ٹرمپ کے حامیوں کے پُر تشدد مظاہروں اور کانگریس کی عمارت پر پولیس کے ساتھ تصادم کے بعد امریکی دارالحکومت میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے جب کہ مظاہرین کیپٹول ہل میں داخل ہونے کے باعث کانگریس کا مشترکہ اجلاس روک دیا گیا ہے۔

واشنگٹن ڈی سی کے میئر میوریل باوزر ٹرمپ کے حامیوں کی جانب سے پرُتشدد مظاہروں کے بعد 24 گھنٹے کے لیے کرفیو نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اعلان کے مطابق میئر کی جانب سے مجاز افراد کے علاوہ کسی شخص کو کرفیو کے دوران نقل و حرکت کی اجازت نہیں ہوگی۔ کرفیو کا اطلاق واشنگٹن کے ہر گلی، محلے، پارک اور عوامی مقام پر بھی ہوگا۔ واضح رہے کہ آج امریکی کانگریس صدارتی انتخابات میں دیے گئے الیکٹورل ووٹوں کی توثیق کررہی ہے۔ جس کے لیے کانگریس میں نائب صدر مائیک پینس کی صدارت میں اجلاس جاری ہے۔

بھارت جنگ میں پاکستان کو شکست نہیں دے سکتا، بھارتی دفاعی ماہر

دوسری جانب امریکی دارالحکومت سمیت مختلف علاقوں میں ٹرمپ کے حامی انتخابی نتائج کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔ صدر ٹرمپ نے بھی ایسی ہی ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے اپنے نائب کے ممکنہ فیصلے سے متعلق مایوسی کا اظہار کردیا تھا۔

Loading...

کانگریس کی عمارت جہاں الیکٹورل ووٹوں کی توثیق کا عمل جاری ہے وہیں سے کچھ ہی فاصلے پر بڑی تعداد میں ٹرمپ کے حامی مظاہرین احتجاج کرتے ہوئے سرکاری عمارت میں داخل ہوئے  جہاں ان کی پولیس سے جھڑپیں بھی ہوئیں جن میں متعدد افراد کے گرفتار کیا گیا.

تاہم کیپٹل ہل میں مظاہرین کے داخلے کے باعث کانگریس کا مشترکہ اجلاس روک دیا گیا ہے۔ متعدد مظاہرین ایوان کے اندر داخل ہونے میں بھی کام یاب ہوگئے ہیں جب کہ مظاہرے کے دوران ایک خاتون زخمی ہوگئیں جن کی حالت تشویشناک ہے۔

(Visited 15 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں